Siasat ke rockstars

گزشتہ دنوں بالی وڈ کے نوجوان اداکار “رنبیرکپور” کی فلم “راک اسٹار “ ہوئی جس میں رنبیر نے ایک نوجوان گلوکار کا کردار نبھایا ہے جو کہ محّبت میں ناکامی کے بعد ایک “باغی” کے روپ میں ابھرتے ہوئے “سڈّا حق اُتّھے رکھ” کی صدا بلند کرتا ہے، اگرچہ فلم میں اے آررحمان کے ترتیب دیئے میوزک کوبہت پسند کیا گیالیکن فلم کو اس حد تک پذیرائی نہیں مل پائی اورباکس آفس پر سیمی ہٹ قرار پائی۔مرکزی کردارمیں باغیانہ جھلک کے حوالے سے ہندوستانی ویب سائٹ “فیکنگ نیوز” نے ایک سیٹائریکل فیچر چھاپا جس میں فلم کے مرکزی کردار اور ڈائرکٹر کی جانب سے یہ بیان دیا گیا تھا کہ بہت جلد رنبیر کپور باغی راک اسٹار کے روپ میں ٹی شرٹس اور پوسٹرز پر گوریلا انقلابی چی گویرا کی جگہ لے لیں گے۔

بھارت میں یہ تجربہ فلم تک محدود رہا لیکن پاکستان میں میوزیکل پرفارمنس ، ساٹھ اور ستّر کی دہائی کی انقلابی شاعری ، بائیں بازو کی اصطلاحات (جسے اب دائیں بازو کی جماعتوں اور سوشل نیٹ ورکس تک محدود لیفٹ کے تھکے ہوئے عناصر نے اپنا لیا ہے) کے سہارے عملا انقلابات لانے کا رجحان زور پکڑتا دکھائی دے رہا ہے

نوجوان گلوکار شہزاد رائے اپنی ایک میوزک وڈیو میں بغاوت پر آمادہ ایک نوجوان کے کردار کی منظرکشی کرتے “قسمت اپنے ہاتھ میں لینے کی دعوت دیتے ہوئے” خود کو میزائل حملے کا نشانہ بنتے دکھارہے ہیں اور اسی طرح کے میزائل حملوں پر سراپا احتجاج عمران خان کے جلسے میں “اٹھ باند کمر کیا ڈرتا ہے” گاتے ہوئے پائے جاتے ہیں، عمران کے اپنے لوگوں نے اسٹنگرز کے بل بوتے پرروس کے خلاف جہاد کیا تھا عمران نے “اسٹرنگز” کو ساتھ ملا لیا ہے اور علی عظمت اپنے فکری مرشد زید زمان حامد کی ہمنوائی کرتے دکھائی دیتے ہیں

سابق وزیراعظم نواز شریف کے فیصل آباد اور سندھ کے جلسوں میں بھی ہجوم اکٹھا کرنے کے لئے گلوکاروں کا سہارا لیا گیاسندھ کے شہر لاڑکانہ کے جلسے کے لئے لگائے گئےکیمپس سے لوگوں کو میاں نواز شریف کے جلسے سے خطاب سننے کی دعوت کے ساتھ یہ بھی بتایا جارہا تھا کہ اس موقع پر محفلِ موسیقی کا بھی انتظام کیا گیا ہے۔گانے کے لئے عوامی سطح پر مقبول گلوکار شمن میرالی کی خدمات حاصل کی گئیں تھیں، تاکہ لوگ تقریر سننے نہ سہی تماشہ دیکھنے کے بہانے ہی چلے آئیں

اب سیاسی عمل میں مقبولیت کی چانچ کا بنیادی عنصر تو بیلٹ باکس ہی ہے وہی اس بات کا فیصلہ ہوگا کہ کس کا شو زیادہ ہٹ رہا لیکن جب تک جانچ کا وہ مرحلہ آئے “سیاست میں میوزک” اور “میوزک میں سیاست” انجوائے کریں، ویسے بھی تماشہ کرنے میں اور دیکھنے میں کیا جاتا ہے

Advertisements

About aliarqam

Highly opinionated Journalist | Working at Newsline | Writing on Karachi | Life, People & Politics | Living in the age of conformity: Unfit at either side of the Divide

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s

%d bloggers like this: